مظفرآباد میں حوا کی بیٹی کی دہائی’شوہر کا بدترین تشدد، پولیس ایف آئی آر کاٹنے سے انکاری

مظفرآباد میں حوا کی بیٹی بدترین تشدد کا شکار ، تھانہ صدر پولیس کا ایف آئی آر درج کرنے سے انکار، ایس ایس پی کو بولو ایف آئی آر درج کرے ملزمان پولیس ملازم ہیں ایف آئی آر درج نہیں کروں گا ایس ایچ او رضوان ڈار کا کورا جواب۔۔۔۔۔۔۔۔ پولیس پیٹی بھائیوں کو بچانےمیں کامیاب متاثرہ خاتون کی دہائی
مظفرآباد (ورلڈ ویوز اردو) چار بچوں کی ماں حاملہ خاتون شوہر کے تشدد کا شکار پولیس نے پیٹی بھائی کیخلاف ایف آئی آر درج کرنے سے انکار کر دیا شوائی میں رہنے والی خاتون کو گزشتہ رات شوہر نے گھر پر حملہ آور ہو کر تشدد کا نشانہ بنایا چھریوں کے وار کرکے بازو اور سینہ زخمی کر دیا تشدد کا شکار ہونیوالی 28 سالہ سمیہ بی بی نے مرکزی ایوان صحافت میں صحافیوں کو تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ شوہر پولیس ملازم صادق عباسی نے ایک ماہ قبل طلاق دے دی ہےگزشتہ رات بھائیوں اور سسر کے ہمراہ میرے گھر آکر حملہ آور ہوئے چھریوں اور ڈنڈوں سے حملہ کرکے مجھے زخمی کر دیا ہے،ایس ایس پی مظفرآباد کے سامنے آج صبح پیش ہوئی جنہوں نے تھانے بھیج دیا تھانہ صدر کے ایس ایچ او رضوان ڈار نے کہا کہ ملزمان پولیس ملازم ہیں ایف آئی آر درج نہیں کروں گا رات کو پولیس نے موقع پر پہنچ کر مجھے ہسپتال پہنچایا واقعے کے 16 گھنٹے گزر جانے کے باوجود بھی ایف آئی آر درج نہ ہوسکی

اپنا تبصرہ بھیجیں