اگر کسی نے ہماری سرحدوں کے تقدس کو پامال کرنے کی کوشش کی تو ہم جارحیت کو کچلنے کے لئے سر دھڑ کی بازی لگا دیں گے۔فیصل راٹھور

اسلام آباد (سٹی رپورٹر)جنرل سیکرٹری پاکستان پیپلزپارٹی آزاد کشمیر فیصل ممتاز راٹھور نے یوم دفاع پاکستان کے موقع پر اپنے ایک بیان میں کہا کہ آج کے دن کو منانے کا مقصد دشمن کو یہ پیغام دینا ہے کہ ملک کی طرف کوئی میلی نگاہ سے دیکھ نہیں سکتا.آج پوری قوم پاکستان اور کشمیر کے ان شہیدوں کو خراج تحسین پیش کر رہی ہے جنھوں نے اپنی جانیں وطن عزیز پر قربان کر دیں.فیصل ممتاز راٹھور کا کہنا تھا کہ 6ستمبر کا دن ہمارے اس عزم کی علامت ہے کہ اگر کسی نے ہماری سرحدوں کے تقدس کو پامال کرنے کی کوشش کی تو ہم جارحیت کو کچلنے کے لئے سر دھڑ کی بازی لگا دیں گے۔ جنگِ ستمبر کا جذبہ ایک کسوٹی ہے جس پر ہم بحرانوں سے نمٹنے کے لئے اپنے کردار اور کارکردگی کو پرکھ سکتے ہیں اور بحیثیتِ قوم اپنے رویوں اور صلاحیتوں کو جانچ سکتے ہیں۔فیصل ممتاز راٹھور نے مزید کہا کہ 1965ء کی جنگ نے جہاں ہمیں اپنے سپاہیوں کی جرأت و استقامت اور بے لوث قربانیوں کو دیکھنے کا موقع فراہم کیا وہاں اس نے ہمارے اجتماعی رویوں کے ان روشن پہلوؤں کو بھی اجاگر کیا جن میں ملی وحدت، تنظیم، حب الوطنی اور قومی افتخار نمایاں ہیں۔ اس دن پوری قوم جارحیت کرنے والوں کو سبق سکھانے کے لئے فردِ واحد کی طرح اٹھ کھڑی ہوئی ۔ ہماری بہادر مسلح افواج اور عوام کے مابین ایک ایسا جذباتی رشتہ استوار کیا جو ہمیشہ دلوں کو گرماتا رہے گا۔ یہ ہمارے قومی شعور کا ایسا بھرپور اور جانفزا تجربہ ہے جو باعثِ افتخار بھی اور قابلِ تقلید بھی۔ آج ہم اپنے شہداء کو خراجِ تحسین پیش کرتے ہیں اور اپنے غازیوں کے لئے سراپا سپاس ہیں ہمیں جنگ کے ایک اہم سبق کو یاد رکھنا چاہئے کہ ایمان و اتحاد اور مشکل حالات کا مقابلہ کرنے اور قربانیاں دینے کے عزم و حوصلے سے ہم کسی بھی جارحیت کا منہ توڑ جواب دے سکتے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہمارے دشمن کے بالا دستی کے عزائم میں آج بھی ذرہ برابر تبدیلی نہیں آئی۔ اس کا مقصد خطے میں اپنی بالا دستی قائم کرنا ہے۔ وہ اپنے غریب عوام کا پیٹ کاٹ کر تمام وسائل اسلحہ کے انبار لگانے میں صرف کر رہا ہے اور اپنے بجٹ کا بڑا حصہ اپنی افواج کو جدید اسلحہ سے لیس کرنے اور مہلک میزائلوں سمیت ہلاکت خیز ہتھیار تیار کرنے پر صرف کر رہا ہے۔ اس دشمن کے جارحانہ عزائم میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے۔ گزشتہ کئی ماہ سے کنٹرول لائن کی مسلسل خلاف ورزیاں اس کی واضح دلیل ہیں۔ بھارت اس وقت خود کو طاقتور اور پاکستان کو اس کے بحرانوں کی وجہ سے بہت کمزور محسوس کر رہا ہے لیکن پاکستان کمزور نہیں ہے۔ بحرانوں میں پھنسے ہوئے ہونے کے باوجود پاکستان اپنے دفاع کی بھرپور صلاحیت سے آراستہ ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں